"لاڈلی" کی سیاست

  •   0
  •   Muhammad Abduhu
  •   0
  •   191
سینٹ الیکشن ہارنے کے بعد سے ن لیگ حالت سوگ میں ہے-

سینٹ الیکشن ہارنے کے بعد سے ن لیگ حالت سوگ میں ہے۔ چند راہنماؤں نے شکست کے ذمہ داری حسب عادت اسٹیبلشمنٹ پر ڈالنے کی کوشش کی لیکن سینیئر لیڈروں نے شکست کو اپنی ناکامی اور غلطی قرار دیتے ہوئے پارٹی سے غداری کرنے والوں کی تلاش پر زور دیا ہے۔ آئندہ ماہ میاں صاحب کے جیل جانے اور اسحاق ڈار کے سینٹ سے نااہل ہونے کے بہت زیادہ چانسز ہیں۔ جس سے پارٹی مزید کمزور ہوگی۔ کیونکہ چند چھوڑ گئے ہیں اور پارٹی ذرائع کے مطابق نگران حکومت بننے تک 55 سے 60 مزید ایم این اے ن لیگ کے چھوڑ جائیں گے۔ اور باقی پارٹی بھی دو حصوں میں تقسیم ہونے کا خطرہ موجود ہے۔

In Trouble

اسٹیبلشمنٹ نے پانامہ سامنے آتے ہی میاں صاحب پر واضح کردیا تھا کہ ہم نے آپ کی بہت خدمت کی ہے۔ آپ کی حکومت کو دو بار عمران خان دھرنا اور ختم نبوت دھرنا کے ہاتھوں ختم ہونے سے بچایا ہے۔ آپ کے وزرا ءکے گھروں پر حملے شروع ہوگئے تھے اور ہم نے ہی آپ کو بچایا تھا۔ ہر جگہ آپ کو لاڈلا رکھا ہے۔ لیکن بدلے میں آپ نے اسٹیبلشمنٹ کی کمر میں چھرا گھونپتے ہوئے سارا الزام ہم پر دھر دیا ہے۔ اب آپ کو کرپشن پر ریسکیو نہیں کرسکتے۔ یہی وہ انکار تھا جس کی وجہ سے میاں صاحب اسٹیبلشمنٹ کے خلاف ہوگئے۔

After Losing Senate Election

پارٹی کے بڑوں کا خیال ہے ن لیگ پر مشکلات میں مریم صفدر کا گہرا کردار ہے۔ جس کے سیاست میں آتے ہی پارٹی کی تباہی شروع ہوگئی تھی۔ جس نے بہت سارے خودساختہ فیصلے کرکے پارٹی کو ناقابل تلافی نقصان پہنچایا ہے۔ نواز شریف اور مریم صفدر جلسوں میں جو الفاظ استعمال کررہے ہیں اس سے پارٹی کا سادہ لوح اور جذباتی طبقہ تو متاثر ہورہا ہے لیکن پارٹی کا سنجیدہ طبقہ اور قومی سلامتی کے ادارے سخت ناراض ہیں۔

Marium Safdar

مریم صفدر کا حامی پارٹی کا ایک حلقہ چاہتا ہے نوازشریف نہیں تو کچھ نہیں پارٹی کیا جمہوری نظام سمیت ہر چیز تہس نہس کردی جائے۔ نوازشریف کو سزا ہوئی تو سول وار شروع ہوجائے گی جبکہ دوسرا گروپ اس کے مخالف ہے اور اس کے مطابق یہ خوش فہمی اور اوور اسیسمنٹ ہے۔ نواز شریف کو سزا ہوئی تو پارٹی ٹکڑوں میں تقسیم ہونے یا شریف خاندان کی سیاست ختم ہونے کے سوا کچھ بھی نہیں ہونا۔ اہم ن لیگی راہنما آف دی ریکارڈ باتیں کررہے ہیں کہ مریم صفدر کی آمریت اور بھیانک غلطیوں کی وجہ سے آئندہ حکومت ن لیگ کو ملنے کی امید نہیں ہے۔ نواز شریف کی لاڈلی ایک ساتھ پارٹی اور ہماری سیاست کو تباہ کرگئی ہے۔ شہباز شریف کے صدر بننے سے بہت ساری امیدیں وابستہ ہیں۔ امید کی جارہی ہے کہ وہ مریم صفدر کا کردار محدود کرکے اسٹیبلشمنٹ کی طرف دوستی کا ہاتھ بڑھائیں گے کیونکہ لاہور مال پر طاہرالقادری کا دھرنا ختم کروانے پر شہباز شریف اور اسٹیبلشمنٹ میں ایک ڈیل ہوئی تھی اور اس کو آگے بڑھانے پر بیک ڈور رابطے ہورہے ہیں۔
لیکن نوازشریف کی ممکنہ سزا پارٹی کی تقسیم برسوں پرانے ساتھیوں کی بغاوت عدلیہ فوج اور اداروں کی ناراضگی عالمی طاقتوں کی بیگانگی اور اپوزیشن کا جارحانہ انداز ن لیگ کے مستقبل پر ایک بہت بڑا سوالیہ نشان لگا رہا ہے۔

Many Questions What will Happen

تحقیق و تحریر۔ محمد عبدہ

0 Reviews
Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image