کوریا کا مشہور ترین جزیرہ ڈوک دو

سمندر کے بیچوں بیچ چند کنال پر مشتمل خشک چٹانوں کا جزیرہ جو کوریا اور جاپان کے درمیان جنگ کے خطرات پیدا کرتا رہتا ہے۔

سمندر کے بیچوں بیچ چند کنال پر مشتمل خشک چٹانوں کا جزیرہ جو کوریا اور جاپان کے درمیان جنگ کے خطرات پیدا کرتا رہتا ہے۔ کوریا اورجاپان کے عین درمیان میں واقع دو چھوٹی سی چٹانیں کوریا سے 216 کلومیٹر اور جاپان سے 211 کلومیٹر دور واقع ہیں۔ ان چٹانوں کو کورینڈوک دو جزیرہ جاپانی میں اوجی ما اور انٹرنیشنل لیان کورٹ کہتے ہیں۔ ڈوک دو جزیرہ 1954 سے کوریا کے قبضے میں ہے۔ جبکہ اس سےپہلے متحدہ کوریا پر جاپان کا قبضہ ہونے کے ناطے ڈوک دو پر بھی جاپان کا قبضہ تھا۔ اس جزیرہ کی واحد قابل زکر بات اردگرد کے سمندرمیں قدرتی گیس کا وسیع زخیرہ ہے۔ جس کی وجہ سے جاپان و کوریا دونوں اس پر اپنا دعوی کرتے ہیں۔ اس کے علاوہ ان چٹانوں میں کوئی اہم چیز واقع نہیں ہے۔

Dokdo Island

Korea Island

ڈوک دو جزیرہ کی سطح سمندر سے انتہائی بلندی 169 میٹر ہے۔ اس جزیرہ پر 1965 سے 1981 تک ایک کورین جونگ دوک آتا جاتا تھا۔ جوقریبی بڑے جزیرے اولنگ دو کا رہنے والا تھا۔ پھر اس کی بیٹی اور داماد مستقل یہیں رہنے لگے۔ پھر ایک اور فیملی بھی یہاں شفٹ ہوگئی۔ اباس چٹانی جزیرے پر کوریا کے 37 فوجی وزارت سمندر و فشری کے 3 اہلکار و لائٹ ہاؤس کو چلانے والے 3 اہلکار رہتے ہیں۔ جن کے کھانےپینے کی ہر چیز کوریا سے لائی جاتی ہے۔

Setting foot on Dokdo

اس جزیرے کے قریب سمندر ہر وقت طغیانی پر رہتا ہے اس لئے مہینہ میں بمشکل ایک دو بار ہی کشتیاں لنگر انداز ہوپاتی ہیں۔ فوجیوں کےرہنے کیلے پکی بیرکیں بنائی گئی ہیں۔ موبائل فون کے دو ٹاور بھی لگے ہوئے ہیں۔ ماضی میں اس جزیرہ کا پہلا تزکرہ چھٹی صدی میں ملتا ہےجب کوریا کی مشہور تین بادشاہتوں کے دور جسے سم گُک ساجی Samguk Saji 삼국사기 کے دوران یہ جزیرہ کوریا میں شمار ہوتا تھا۔پھر شلا اور چُوسن بادشاہت میں بھی اسے مختلف کورین ناموں سے پکارا جاتا رہا ہے۔ 1592 میں جاپان نے کوریا پر قبضے کے ساتھ ہی ڈوکدو ہر بھی قبضہ کرلیا جسے کوریا نے گوریلا وار کرکے آزاد کروا لیا۔بیسویں صدی میں جاپان نے ایک بار پھر قبضہ کیا جو جنگ عظیم دوئمکے بعد ختم ہوگیا آور تب سے جنوبی کوریا کے کنٹرول میں ہے۔
اس پر ایک تیسرا فریق شمالی کوریا بھی حق جتاتا ہے۔ حقیقت میں دو چھوٹی سی چٹانوں پر کوریا و جاپان دو بار جنگ لڑ چکے ہیں اور کئی بارفوجیں آمنے سامنے لڑنے کو تیار ہوچکی ہیں۔ کوریا کیلے ڈوک دو قومی عزت و غیرت کا نشان ہے جس کیلے کورین عوام لڑنے مارنے تکتیار ہوجاتی ہے۔
کورین حکومت نے ڈوک دو جزیرے کو سیاحوں کیلے کھول دیا ہے۔ کوریا میں پوسان و پوہانگ سے بڑے بحری جہاز اولنگ دو جزیرے جاتےہیں۔ جو کوریا کا خوبصورت ترین جزیرہ کہلاتا ہے اور ہر وقت سیاحوں سے بھرا رہتا ہے۔ اولنگ دو سے چھوٹی فیری پر ٹور کمپنیاں سیاحوں کو ڈوک دو دکھانے لیجاتی ہیں۔

Map of Dokdo Island

Flag of Korea

Island of Korea

South Korean tourists are on a tour of Seodo, part of the disputed Dokdo islets

تحقیق و تحریر۔ محمد عبدہ

1 Reviews
  • User Image
    Muzammal arshad
  • ایک سال پہلے
  • Good

Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image