پاکستان کے چندمشہورشہروں کی تاریخ

  •   5
  •   Naveed Khan
  •   1
  •   709
اپنے ملک اپنی مٹی اور اپنے وطن سے پیار ہونا ﮨﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﻓﻄﺮﺕ میں شامل ﮨﮯ۔

اپنے ملک اپنی مٹی اور اپنے وطن سے پیار ہونا ﮨﺮ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﮐﯽ ﻓﻄﺮﺕ میں شامل ﮨﮯ۔ یہ ایک فطری امر ہے کہ انسان ﺩﻧﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺟﮩﺎﮞ کہیں بھی رہے اسے ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ محبت ضرور ہوتی ﮨﮯ۔ ساتھ ہی ساتھ یہ بات بھی قابل ذکر ہے کہ ﺟﺐ ﮨﻢ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ ﺍﭘﻨﮯ ﻣﻠﮏ سے پیار ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﺗﻮ ﺍﺱ میں بسنے والے لوگوں اور ﺷﮩﺮﻭﮞ ﺳﮯ ﺑﮭﯽ پیار ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ۔ ہمارے پیارے ملک ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺷﮩﺮ ﺑﮩﺖ ہی ﺧﻮﺑﺼﻮﺭﺕ ﮨﯿﮟ۔ ﮐﺴﯽ ﺑﮭﯽ ﺷﮩﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﻧﮧ ﺻﺮﻑ ﺍﯾﮏ ﻣﻨﻔﺮﺩ ﺷﻨﺎﺧﺖ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﮯ بلکہ ﺍﭘﻨﮯ ﺍﻧﺪﺭ ﺍﯾﮏ ﺗﺎﺭﯾﺨﯽ اہمیت بھی ﺭﮐﮭﺘﺎ ﮨﮯ۔

ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ .


ﻟﻔﻆ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ’’ ﭘﺎﮎ ‘‘ ﺍﻭﺭ ’’ ﺳﺘﺎﻥ ‘‘ ﮐﻮ ﻣﻼ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﭘﺎﮎ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ’’ ﺭﻭﺣﺎﻧﯽ اﻮﺭ ﺻﺎﻑ ‘‘ ﮨﮯ ﺍﻭﺭ ﺳﺘﺎﻥ ﺳﻨﺴﮑﺮﺕ ﮐﮯ لفظ ’’ ﺍﺳﺘﮭﺎﻥ ‘‘ ﺳﮯ ﻧﮑﻼ ﮨﮯ ﺟﺲ ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﮯ ﻣﻠﮏ، ﻋﻼﻗﮧ ﯾﺎ ﺭﮨﻨﮯ ﮐﯽ ﺟﮕﮧ۔ ﺗﻮ پاکستان ﮐﺎ ﻣﻄﻠﺐ ﺍﯾﺴﯽ ﭘﺎﮎ ﺟﮕﮧ ﺟﮩﺎﮞ ﭘﺎﮎ لوگ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺎ ’’ ﭖ ‘‘ ﭘﻨﺠﺎﺏ ﺳﮯ، ’’ ﺍﻓﻐﺎﻧﯿﮧ ‏( ﺧﯿﺒﺮ ﭘﺨﺘﻮﻧﺨﻮﺍ ‏) ﺳﮯ، ’’ ﮎ ‘‘ ﻤﯿﺮ ﺳﮯ، ’’ ﺱ ‘‘ ﺳﻨﺪﮪ ﺳﮯ ﺍﻭﺭ ’’ ﺗﺎﻥ ‘‘ بلوچستان ﺳﮯ ﻟﯿﺎ ﮔﯿﺎ ﮨﮯ۔ ﺍﭘﻨﮯ ﻭﻃﻦ ﺳﮯ ﻣﺤﺒﺖ ﮨﻮنا اور ﺍﺱ ﮐﮯ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﺳﮯ پیار ﮨﻮﻧﺎ ﻓﻄﺮﯼ ﮨﮯ۔ ہمارے پیارے ملک ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﺭﮮ ﺷﮩﺮ ﮨﻤﺎﺭﮮ ﻟﯿﮯ بہت ہی محترم اور پیارے ہیں۔ اب میں آپ کو بتاتا ہوں کہ ﺍﻥ ﺷﮩﺮﻭﮞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﮐﯿﺴﮯ ﮐﮭﮯ ﮔﺌﮯ۔

ﺍﺳﻼﻡ ﺁﺑﺎﺩ :


اسلام آباد 1959ء ﻣﯿﮟ ﻣﺮﮐﺰﯼ ﺩﺍﺭﺍﻟﺤﮑﻮﻣﺖ کا علاقہ قرار پایا۔ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ پاکستان کے مسلمانوں نے ﻣﺬﮨﺐ ﺍﺳﻼﻡ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ﺍﺳﻼﻡ ﺁﺑﺎﺩ ﺭﮐﮭﺎ۔

ﺭﺍﻭﻟﭙﻨﮉﯼ :


سارا علاقہ راول قوم کی آماجگاہ تھا۔ اس کی باقاعدہ بنیاد پندرھویں صدی میں ﭼﻮﺩﮬﺮﯼ ﺟﮭﻨﮉﮮ ﺧﺎﻥ ﺭﺍﻭﻝ ﻧﮯ رکھی۔

ﮐﺮﺍﭼﯽ :


ﺗﻘﺮﯾﺒﺎً 220 ﺳﺎﻝ ﻗﺒﻞ یہاں صرف ماہی گیروں کا بسیرا تھا۔ ایک مشہور بلوچ کس کا نام کلاچو تھا ﮐﮯ ﻧﺎﻡ پر ﺍِﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﮐﻼﭼﯽ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ۔ اور ﭘﮭﺮ بتدریج یہ نام ﮐﺮﺍﭼﯽ میں تبدیل ہو ﮔﯿﺎ۔ 1925ﺀ ﻣﯿﮟ کراچی کو ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺣﯿﺜﯿﺖ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ۔ ۱۹۴۷ﺀ ﺳﮯ ۱۹۵۹ﺀ ﺗﮏ کراچی ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺎ ﺩﺍﺭﺍﻟﺤﮑﻮﻣﺖ بھی ﺭﮨﺎ۔

ﺣﯿﺪﺭﺁﺑﺎﺩ :


حیدرآباد ﮐﺎ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﻧﺎﻡ ﻧﯿﺮﻭﻥ ﮐﻮﭦ ﺗﮭﺎ۔ پھر وہاں کے لوگوں ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﺣﻀﺮﺕ ﻋﻠﯽؓ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﻨﺴﻮﺏ ﮐﺮﮐﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺣﯿﺪﺭ ﺁﺑﺎﺩ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔ ﺍﺱ شہر کی ﺑﻨﯿﺎﺩ ﻏﻼﻡ ﮐﻠﮩﻮﮌﺍ ﻧﮯ ۱۷۶۸ﺀ ﻣﯿﮟ ﺭﮐﮭﯽ۔ ۱۸۴۳ﺀ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰﻭﮞ ﻧﮯ اس ﺷﮩﺮ ﭘﺮ ﻗﺒﻀﮧ ﮐﺮﻟﯿﺎ۔ 1935ء میں حیدر آباد کو ضلع کا درجہ ملا۔

پشاور :


ایک اندازے کے مطابق چونکہ یہاں کے لوگ بہت سخت جان اور کشاکش ہیں اس لئے ﭘﯿﺸﮧ ﻭﺭ ﻟﻮﮔﻮﮞ ﮐﯽ ﻧﺴﺒﺖ ﺳﮯ ﺍﺱ خوبصورت شہر کا نام ﭘﺸﺎﻭﺭ ﭘﮍ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﯾﮏ اور روایت سے یہ بات بھی سامنے آتی ہے کہ محمود غزنوی نے اسے پشاور کا نام دیا تھا۔

ﮐﻮﺋﭩﮧ :


کوئٹہ کا پرانا نام کواٹا تھا۔ لفظ کواٹا کا مطلب قلعہ ہے۔ ﺑﮕﮍﺗﮯ ﺑﮕﮍﺗﮯ ﯾﮧ ﮐﻮﺍﭨﺎ ﺳﮯ اس کا نام ﮐﻮﺋﭩﮧ ﺑﻦ ﮔﯿﺎ۔

ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ :


اس شہر کا نام دو لفظوں ﺳﺮ ﺍﻭﺭ ﮔﻮﺩﮬﺎ ﺳﮯ ﻣﻞ ﮐﺮ ﺑﻨﺎ ﮨﮯ۔ ہندی زبان ﻣﯿﮟ ﺳﺮ کے مطلب ﺗﺎﻻﺏ کے ہیں، جبکہ ﮔﻮﺩﮬﺎ ایک ﻓﻘﯿﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺗﮭﺎ ﺟﻮ اس علاقے کے کسی ﺗﺎﻻﺏ ﮐﮯ ﮐﻨﺎﺭﮮ ﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﯽ ﻟﯿﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﮔﻮﺩﮬﮯ ﻭﺍﻻ ﺳﺮ بن ﮔﯿﺎ۔ جو ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﺮﮔﻮﺩﮬﺎ ﮐﮩﻼﯾﺎ۔ 1903 میں باقاعدہﺀ یہ شہر ﺁﺑﺎﺩ ﮨﻮﺍ۔

ﺑﮩﺎﻭﻟﭙﻮﺭ :


بہاولپور کا نام وہاں کے نواب بہاول خان کے نام پر رکھا گیا۔ ایک عرصہ ﺗﮏ ﯾﮧ ﺭﯾﺎﺳﺖ ﺑﮩﺎﻭﻟﭙﻮﺭ ﮐﺎ ﺻﺪﺭ ﻣﻘﺎﻡ بھی ﺭﮨﺎ۔ پاکستان ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺍﻟﺤﺎﻕ ﮐﺮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﯾﮧ ﭘﮩﻠﯽ ریاست ﺗﮭﯽ۔ ﻭﻥ ﯾﻮﻧﭧ ﮐﮯ ﻗﯿﺎﻡ ﺗﮏ اس علاقے میں عباسی ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﯽ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﺗﮭﯽ۔

ﻣﻠﺘﺎﻥ :


ﺍﺱ ﮐﺎ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ نام ’’ ﮐﯿﺴﺎﭘﻮﺭ ‘‘ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔
ﮐﮩﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ملتان ﺷﮩﺮ ﮐﯽ ﺗﺎﺭﯾﺦ 1000 ﺳﺎﻝ ﻗﺪﯾﻢ ﮨﮯ۔ مسلم سائنسدان ﺍﻟﺒﯿﺮﻭﻧﯽ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﺳﮯ ﮨﺰﺍﺭﻭﮞ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﺁﺧﺮﯼ ﮐﺮﺕ ﺳﮕﯿﺎ ﮐﮯ ﺯﻣﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔

ﻓﯿﺼﻞ ﺁﺑﺎﺩ :


فیصل آباد کا پرانا نام ﺍﯾﮏ ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺳﺮ ﺟﯿﻤﺰﻻﺋﻞ ‏کے نام پر رکھا گیا جس ﻧﮯ اسے ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯿﺎ۔ ﺍُﺱ کا ﻧﺎﻡ ﻻﺋﻞ ﭘﻮﺭ لائل پور رکھا گیا۔ ﺑﻌﺪﺍﺯﺍﮞ ﻋﻈﯿﻢ ﺳﻌﻮﺩﯼ ﻓﺮﻣﺎﮞ ﺭﻭﺍ ﺷﺎﮦ ﻓﯿﺼﻞ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ اس شہر کو ﻣﻮﺳﻮﻡ ﮐﺮ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔

ﭨﻮﺑﮧ ﭨﯿﮏ ﺳﻨﮕﮫ :


ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺍﯾﮏ ﺳﮑﮫ “ ﭨﯿﮑﻮ ﺳﻨﮕﮫ کے ﻧﺎﻡ ﭘﮧ ﮨﮯ “ ﭨﻮﺑﮧ ” ﺗﺎﻻﺏ ﮐﻮ ﮐﮩﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ ﯾﮧ ﺩﺭﻭﯾﺶ ﺻﻔﺖ ﺳﮑﮫ ﭨﯿﮑﻮ ﺳﻨﮕﮫ ﺷﮩﺮ کے ﺭﯾﻠﻮﮮ ﺍﺳﭩﯿﺸﻦ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﯾﮏ ﺩﺭﺧﺖ ﮐﮯ ﻧﯿﭽﮯ ﺑﯿﭩﮭﺎ ﺭﮨﺘﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﭨﻮﺑﮧ ﯾﻌﻨﯽ تالاب ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﺑﮭﺮ ﮐﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺱ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﺳﭩﯿﺸﻦ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺴﺎﻓﺮﻭﮞ ﮐﻮ ﭘﺎﻧﯽ پلایا ﮐﺮﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔

ﺭﺣﯿﻢ ﯾﺎﺭ ﺧﺎﻥ :


اس قدیم شہر کا نام ﺑﮩﺎﻭﻟﭙﻮﺭ ﮐﮯ ﻋﺒﺎﺳﯿﮧ ﺧﺎﻧﺪﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ اور نواب جن کا نام ﻧﻮﺍﺏ ﺭﺣﯿﻢ ﯾﺎﺭ ﺧﺎﮞ ﻋﺒﺎﺳﯽ تھا کہ نام پر یہ ﺷﮩﺮ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔

ﺳﺎﮨﯿﻮﺍﻝ :


ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺩﻭﺭ ﻣﯿﮟ ایک ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﮔﻮﺭﻧﺮ ﻣﻨﭩﮕﻤﺮﯼ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﭘﺮ ” ﻣﻨﭩﮕﻤﺮﯼ “ ﮐﮩﻼﯾﺎ۔
اس شہر میں ساہی قوم کے لوگوں کا بسیرا تھا ۔ اسی وجہ سے یہ ﺳﺎﮨﯽ ﻭﺍﻝ ﮐﮩﻼﯾﺎ۔ ﻧﻮﻣﺒﺮ 1966 ﺀ ﺻﺪﺭ ﺧﺎﮞ ﻧﮯ ﻋﻮﺍﻡ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﻟﺒﮯ ﭘﺮ ﺍﺱ ﺷﮩﺮ ﮐﺎ ﭘﺮﺍﻧﺎ ﻧﺎﻡ ﯾﻌﻨﯽ ﺳﺎﮨﯿﻮﺍﻝ ﺑﺤﺎﻝ ﮐﺮﺩﯾﺎ۔

ﺳﯿﺎﻟﮑﻮﭦ :


2 ﮨﺰﺍﺭ ﻗﺒﻞ ﻣﺴﯿﺢ ﻣﯿﮟ ﺭﺍﺟﮧ ﺳﻠﮑﻮﭦ ﻧﮯ ﺷﮩﺮ کو آباد کیا۔ ﺑﺮﻃﺎﻧﻮﯼ ﻋﮩﺪ ﻣﯿﮟ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺳﯿﺎﻟﮑﻮﭦ ﺭﮐﮭﺎ ﮔﯿﺎ۔

ﮔﻮﺟﺮﺍﻧﻮﺍﻟﮧ :


ﺍﯾﮏ ﺟﺎﭦ جس کا نام ﺳﺎﻧﮩﯽ ﺧﺎﮞ تھا ﻧﮯ ﺍﺳﮯ 1365 ﺀ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯿﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ” ﺧﺎﻥ ﭘﻮﺭ “ ﺭﮐﮭﺎ۔ لیکن بعد میں ﺍﻣﺮﺗﺴﺮ ﺳﮯ ہجرت کرکے ﯾﮩﺎﮞ ﺁﺑﺎﺩ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﮔﻮﺟﺮﻭﮞ ﻧﮯ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ تبدیل ﮐﺮ کے ﮔﻮﺟﺮﺍﻧﻮﺍﻟﮧ ﺭﮐﮫ ﺩﯾﺎ۔

ﺷﯿﺨﻮﭘﻮﺭﮦ :


یہ شہر ﻣﻐﻞ ﺣﮑﻤﺮﺍﻥ ﻧﻮﺭﺍﻟﺪﯾﻦ ﺳﻠﯿﻢ ﺟﮩﺎﻧﮕﯿﺮ کے ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﯿﺎ گیا۔ ﺍﮐﺒﺮ ﺍﭘﻨﮯ ﭼﮩﯿﺘﮯ ﺑﯿﭩﮯ ﮐﻮ ﭘﯿﺎﺭ ﺳﮯ ” ﺷﯿﺨﻮ “ کے نام سے ﭘﮑﺎﺭﺗﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺳﯽ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﺷﯿﺨﻮﭘﻮﺭﮦ یہ ﮐﮩﻼﯾﺎ۔

ﻣﻈﻔﺮ ﮔﮍﮪ :


ﻭﺍﻟﯽ ﻣﻠﺘﺎﻥ ﻧﻮﺍﺏ ﻣﻈﻔﺮﺧﺎﮞ ﮐﺎ ﺁﺑﺎﺩ ﮐﺮﺩﮦ ﺷﮩﺮ۔ 1880 ﺀﺗﮏ ﺍﺱ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ” ﺧﺎﻥ ﮔﮍﮪ “ رہا بعد ازاں ﺍﻧﮕﺮﯾﺰ ﺣﮑﻮﻣﺖ ﻧﮯ ﺍﺳﮯ ﻣﻈﻔﺮﮔﮍﮪ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ۔

1 Reviews
  • User Image
    Shujaat Khan
  • 2 سال پہلے
  • Very nice mazza aa gaya!

Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image