ٹیلی پیتھی مختصر سا تعارف

ﺍﺱ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﮐﺎﺭ ﯾﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ اپنے ﻣﻌﻤﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺎﺵ ﮐﮯ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﮔﮉﯼ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔

ٹیلی پیتھی کیا ہے اس کے متعلق ایک دوست نے پوچھا تو یہ مختصر سا تعارف جاننے کو ملا۔
کسی دوسرے شخص کے دماغ میں اپنے ﺧﯿﺎﻻﺕ کو ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﺮﻧﮯ کا ﺧﻔﯿﮧ ﻋﻠﻢ ﯾﺎ ﻋﻤﻞ ٹیلی پی تھی کہلاتا ہے۔
ﯾﮧ ﻋﻠﻢ ایک لمبے عرصے ﺳﮯ ﺯﯾﺮ ﻋﻤﻞ ﮨﮯ۔ ﻟﯿﮑﻦ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻥ ﺍﺱ ﭘﺮ ﯾﻘﯿﻦ ﻧﮩﯿﮟ ﺭﮐﮭﺘﮯ یا کم یقین رکھتے ﺗﮭﮯ۔ ﺍﻟﺒﺘﮧ ﺍﺏ ﮐﭽﮫ ﺳﺎﺋﻨﺲ ﺩﺍﻥ ﺍﺱ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﺫﺍﺗﯽ ﺗﺠﺮﺑﮯ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ مانتے بھی ہیں اور یقین بھی رکھتے ﮨﯿﮟ۔ ﺍﺱ ﻣﻮﺿﻮﻉ ﭘﺮ ﺳﺐ ﺳﮯ قابل تعریف ﻟﭩﺮﯾﭽﺮ ﮈﺍﮐﭩﺮ ﺭﺍﺋﺲ ﮐﯽ ﺗﺼﻨﯿﻒ ﮨﮯ۔ ﮈﺍﮐﭩﺮ رائس کے مطابق اپنے خیالات کسی دوسرے کو ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﯽ ﻃﺎﻗﺖ ﮐﻢ ﻭ ﺑﯿﺶ ﮨﺮ ﺷﺨﺺ ﻣﯿﮟ موجود ہوتی ﮨﮯ۔ ڈاکٹر رائس ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﻤﺎﻡ ﺩﻋﻮﻭﮞ ﮐﻮ ﺍﭘﻨﮯ ﻋﻤﻞ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﺮﺑﺎﺕ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺛﺎﺑﺖ بھی ﮐﯿﺎ ۔ﺍﺱ ﮐﺎ ﻃﺮﯾﻘﮧ ﮐﺎﺭ ﯾﮧ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ اپنے ﻣﻌﻤﻮﻝ ﻣﯿﮟ ﺗﺎﺵ ﮐﮯ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﮔﮉﯼ ﺭﮐﮭﺘﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻥ ﭘﺘﻮﮞ ﭘﺮ ﭼﺎﺭ ﻗﺴﻢ ﮐﮯ مختلف اور ﺳﺎﺩﮦ ﮈﯾﺰﺍﺋﻦ بنے ﺗﮭﮯ۔ ﻋﺎﻣﻞ ﮔﮉﯼ ﭘﺮ ﺳﮯ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﺭﮈ ﺍﭨﮭﺎﺗﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﮭﺎ۔ ﺍﻭﺭ ﻣﻌﻤﻮﻝ ﻣﺤﺾ ﻋﺎﻣﻞ ﮐﮯ ﭼﮩﺮﮮ ﭘﺮ ﻧﻈﺮ ﮈﺍﻝ ﮐﺮ ﺍﻥ ﭘﺘﻮﮞ ﮐﯽ ﺣﻘﯿﻘﺖ ﺑﺘﺎﺗﺎ ﺟﺎﺗﺎ ۔ اسی طرح ﺍﯾﮏ 12 ﺳﺎل کے ﺑﭽﮯ ﻧﮯ ﺗﺎﺵ ﮐﯽ پوری ﮔﮉﯼ ﮐﮯ ﮨﺮ ﭘﺘﮯ ﮐﯽ بلکل درست ﮐﯿﻔﯿﺖ ﺑﺘﺎ ﺩﯼ ۔


1871ء میں ﭨﯿﻠﯽ ﭘﯿﺘﮭﯽ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺳﺐ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﻣﺴﭩﺮ ﺳﺠﻮﮎ Sidgwick ﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﺗﺠﺮﺑﺎت ﮐﯿﮯ ﺗﮭﮯ۔ ﺍﺱ ﻋﻠﻢ ﮐﮯ ﺑﺎﺭﮮ ﻣﯿﮟ ﺍﺏ ﺑﮭﯽ ﻣﻄﺎﻟﻌﮧ ، تجربات ﺍﻭﺭ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﺟﺎﺭﯼ ﮨﮯ ۔ ﺳﺮ ﮈﺑﻠﯿﻮ ﮐﺮﮐﺲ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻋﻠﻢ ﮐﯽ مزید ﻭﺿﺎﺣﺖ بیان ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﮩﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﺍﻣﻮﺍﺝ ﮐﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﻠﺴﻠﮯ ﮐﯽ ﺑﺪﻭﻟﺖ ﺍﯾﮏ ﺍﻧﺴﺎﻥ ﺩﻭﺳﺮﮮ انسان کے دماغ ﺗﮏ ﺍﭘﻨﮯ ﺧﯿﺎﻻﺕ ﭘﮩﻨﭽﺎ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﺍس سے ملتا جلتا ﻧﻈﺮﯾﮧ ﮨﻨﺪﻭﺅﮞ ﻣﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﭘﺎﯾﺎ ﺟﺎﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﺩﻣﺎغوں کا ﺭﺍﺑﻄﮧ، ﺳﺎﺋﻨﺲ ﻓﮑﺸﻦ ﻓﻠﻤﻮﮞ ﺳﮯ ﻧﮑﻞ ﮐﺮ ﺍﺏ ﺣﻘﯿﻘﺖ کا روپ دھار چکا ہے۔ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺩﻭ ﭼﻮﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﺫﮨﻨﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﻭﻧﮏ ﺭﺍﺑﻄﮧ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﻥ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﻟﻨﮏ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺭﯾﺌﻞ ﭨﺎﺋﻢ ﻣﯿﮟ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﺍﻭﺭ ﻣﺸﺘﺮﮐﮧ ﮐﻮﺷﺶ ﺳﮯ ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺣﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﻣﺸﺎﮨﺪﮦ ﮐﯿﺎ۔ ﺑﺮﺍﺯﯾﻞ ﮐﯽ ﺍﯾﮏ ﻟﯿﺒﺎﺭﭨﺮﯼ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﯾﮏ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﯽ ﺫﮨﻨﯽ ﮐﯿﻔﯿﺖ ﮐﻮ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﻭﻧﮏ ﺳﯿﻨﺴﺮﺯ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﺑﺬﺭﯾﻌﮧ ﺍﻧﭩﺮﻧﯿﭧ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﯾﮏ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﺗﮏ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔


ایک سائنسی ﺟﺮﯾﺪﮮ ’ ﺳﺎﺋﻨﭩﯿﻔﮏ ﺭﭘﻮﺭﭨﺲ ‘ ﻣﯿﮟ ﺷﺎﺋﻊ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﯽ ﺭﭘﻮﺭﭦ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﺱ ﻟﻨﮏ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺍﻣﺮﯾﮑﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺑﺮﺍﺯﯾﻞ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﯽ ﺣﺮﮐﺎﺕ ﻭﺳﮑﻨﺎﺕ کو ﻧﻘﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ تجربہ ﮐﯿﺎ۔ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﻧﮯ ﺍس عمل کو ﺩﻣﺎﻏﯽ ﺭﺍﺑﻄﮯ ﯾﺎ ﻣﺎﺋﻨﮉ ﻟﻨﮏ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﮨﮯ۔ ﺑﺮﺍﺯﯾﻞ ﮐﮯ ﺷﮩﺮ ﻧﺘﺎﻝ ﮐﮯ ﺭﯾﺴﺮﭺ ﺍﻧﺴﭩﯿﭩﯿﻮﭦ ﮐﮯ ﻧﯿﻮﺭﻭ ﺑﺎﺋﯿﺎﻟﻮﺟﺴﭧ ﻣﯿﮕﯿﻞ ﻧﮑﻮﻟﯿﻠﯿﺲ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ ﺍﺱ ﭘﯿﺸﺮﻓﺖ ﺳﮯ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ ﻣﻨﺴﻠﮏ ﮐﺮﮐﮯ ' ﺁﺭﮔﯿﻨﮏ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮ ‘ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﮐﯽ ﺭﺍﮦ ﮨﻤﻮﺍﺭ ﮨﻮ ﮔﺌﯽ ﮨﮯ۔ اس ﺗﺠﺮﺑﮯ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﭼﻮﮨﮯ ﻧﮯ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﻮﻧﺴﺎ ﺑﭩﻦ ﺩﺑﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ انعام کے طور پر ﺧﻮﺭﺍﮎ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ایک ﺧﺒﺮ ﺭﺳﺎﮞ ﺍﺩﺍﺭﮮ سے ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻧﮑﻮﻟﯿﻠﯿﺲ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ، ’’ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺩﻭ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﯾﮏ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﻮﺍ ﺭﺍﺑﻄﮧ ﭘﯿﺪﺍ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﯽ ﮨﮯ۔ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﺳﭙﺮ ﺑﺮﯾﻦ ﺑﻨﺎﯾﺎ ﮨﮯ ﺟﻮ ﺩﻭ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﭘﺮ ﻣﺸﺘﻤﻞ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﻣﯿﮕﯿﻞ ﻧﮑﻮﻟﯿﻠﯿﺲ ﮐﯽ ﭨﯿﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ ﭘﯿﺎﺳﮯ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﻮ ﺍﺑﺘﺪﺍﺋﯽ ﭨﺮﯾﻨﻨﮓ ﺩﯼ ﺟﻮ ﻣﺨﺘﻠﻒ اقسام کی ﺭﻭﺷﻨﯿﻮﮞ ﮐﻮ ﭘﮩﭽﺎﻧﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﯾﮏ ﻟﯿﻮﺭ ﮐﻮ ﺩﺑﺎﺗﺎ ہے ﺍﻭﺭ ﺍﺱ ﮐﮯ ﻧﺘﯿﺠﮯ ﻣﯿﮟ انعام کے طور پر پیاس بجھانے ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﻣﻠﺘﺎ ہے۔ ﺍﺱ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ سائنسدانوں ﻧﮯ ایک بہت ﺑﺎﺭﯾﮏ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﻭﮈﺯ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﭘﺮ ﻟﮕﺎﺋﮯ ﺟﻮ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ باریک اور ﻧﺎﺯﮎ ﺗﺎﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺫﺭﯾﻌﮯ ﺍﯾﮏ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮ ﺳﮯ جڑے ہوئے ﺗﮭﮯ۔ ﻧﺘﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﭼﻮﮨﺎ ﺟﺴﮯ ﺗﮑﻨﯿﮑﯽ ﺍﺻﻄﻼﺡ ﻣﯿﮟ ’ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ‘ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ، ﮐﯿﻮﻧﮑﮧ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻣﺎﻍ ﭘﺎﻧﯽ ﯾﺎ ﺍﻧﻌﺎﻡ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﭘﺰﻝ ﯾﺎ ﻣﻌﻤﮯ ﮐﻮ ﺣﻞ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﯾﮑﻞ ﺳﮕﻨﻠﺰ ﺑﮭﯿﺠﺘﺎ ﮨﮯ۔ ﯾﮧ ﺍﻟﯿﮑﭩﺮﯾﮑﻞ ﺳﮕﻨﻠﺰ ﺑﺬﺭﯾﻌﮧ ﺍﻧﭩﺮﻧﯿﭧ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﺭﯾﺌﻞ ﭨﺎﺋﻢ ﻣﯿﮟ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻍ ﮐﮯ ’ ﮐﻮﺭﭨﯿﮑﺲ ‘ ﺗﮏ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﯿﮯ ﮔﺌﮯ۔ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﻮ ﺗﮑﻨﯿﮑﯽ ﺍﺻﻄﻼﺡ ﻣﯿﮟ ’ ﮈﯼ ﮐﻮﮈﺭ ‘ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺷﻤﺎﻟﯽ ﮐﯿﺮﻭﻻﺋﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻭﯾﺴﺎ ﮨﯽ ﺍﭘﺮﯾﭩﺲ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ ﺟﺴﯿﺎ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ۔ ﺗﺎﮨﻢ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﻮ ﺍﺱ ﺍﭘﺮﯾﭩﺲ ﺳﮯ ﭘﺎﻧﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﮐﺴﯽ ﻗﺴﻢ ﮐﯽ ﮐﻮﺋﯽ ﭨﺮﯾﻨﻨﮓ ﻧﮩﯿﮟ ﺩﯼ ﮔﺌﯽ ﺗﮭﯽ۔ ﺗﺠﺮﺑﮯ ﮐﮯ ﺩﻭﺭﺍﻥ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﭼﻮﮨﮯ ﻧﮯ ﺳﯿﮑﮭﺎ ﮐﮧ ﮐﻮﻧﺴﺎ ﺑﭩﻦ ﺩﺑﺎﻧﮯ ﺳﮯ ﺍﺳﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﺍﻧﻌﺎﻡ ﺧﻮﺭﺍﮎ ﻣﻠﺘﯽ ﮨﮯ۔ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﯽ ﺫﮨﻨﯽ ﺍﯾﮑﭩﯿﻮﯾﭩﯽ ﮐﺎ ﭘﯿﭩﺮﻥ ﯾﺎ ﺗﺮﺗﯿﺐ ﺟﺐ ﺩﻭﺳﺮﮮ ﭼﻮﮨﮯ ﯾﺎ ﮈﯼ ﮐﻮﮈﺭ ﺗﮏ ﻣﻨﺘﻘﻞ ﮐﯽ ﺟﺎﺗﯽ ﺗﻮ ﻭﮦ ﮐﺴﯽ ﻧﻈﺮ ﺁﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﺍﺷﺎﺭﮮ ﮐﯽ ﻏﯿﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩﮔﯽ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻭﮨﯽ ﻋﻤﻞ ﺩﮨﺮﺍﺗﺎ ﺟﻮ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﭼﻮﮨﮯ ﻧﮯ ﮐﯿﺎ ﺗﮭﺎ ﺍﻭﺭ ﺍﺱ عمل کی ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﮐﺎ ﺗﻨﺎﺳﺐ 70 ﻓﯿﺼﺪ ﺗﮏ حاصل ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺷﻤﺎﻟﯽ ﮐﯿﺮﻭﻻﺋﻨﺎ ﻣﯿﮟ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺍﺱ ﭼﻮﮨﮯ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺑﺎﻟﮑﻞ ﻭﯾﺴﺎ ﮨﯽ ایک ﺍﭘﺮﯾﭩﺲ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﺗﮭﺎ جس طرح کا ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ موجود تھا۔ ﻧﮑﻮﻟﯿﻠﯿﺲ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺟﺎﺭﯼ ﮐﺮﺩﮦ ﺍﯾﮏ ﺑﯿﺎﻥ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ’’ ﯾﮧ ﺗﺠﺮﺑﺎﺕ اس بات کو ﺛﺎﺑﺖ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﯿﮟ ﮐﮧ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ ﭼﻮﮨﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﮐﮯ ﺩﺭﻣﯿﺎﻥ ﺍﯾﮏ ﺑﮩﺖ ﮨﯽ ﻧﺎﺯﮎ ﺍﻭﺭ ﺑﺮﺍﮦ ﺭﺍﺳﺖ لنک بنا ﻟﯿﺎ ہے ۔ ﺍﻭﺭ ﯾﮧ ﮐﮧ ﮈﯼ ﮐﻮﮈﺭ ﮐﺎ ﺩﻣﺎﻍ ﺩﺭﺍﺻﻞ ﺍﯾﮏ ’ ﭘﯿﭩﺮﻥ ﺭﯾﮑﮕﻨﯿﺸﻦ ﮈﯾﻮﺍﺋﺲ ‘ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﺮﺗﺎ ﮨﮯ۔ ﻟﮩﺬﺍ ﮨﻢ ﻧﮯ ﺍﯾﮏ اس طرح کی ﭼﯿﺰ ﺑﻨﺎﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﺣﺎﺻﻞ ﮐﺮ ﻟﯽ ﮨﮯ جسے ﻣﯿﮟ ﺁﺭﮔﯿﻨﮏ ﮐﻤﭙﯿﻮﭨﺮ ﮐﺎ ﻧﺎﻡ ﺩﯾﺘﺎ ﮨﻮﮞ۔


‘‘ ﺟﺐ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﭼﻮﮨﺎ ﮐﺴﯽ بھی ﮐﺎﻡ ﮐﻮ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﮨﻮ ﺟﺎﺗﺎ ﺗﻮ ﺍﺱ ﮐﺎ ﺩﻣﺎﻍ ﭘﮩﻠﮯ ﭼﻮﮨﮯ ﯾﺎ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺍﺱ ﮐﺎ پیغام ﺑﮭﯿﺠﺘﺎ ﺍﻭﺭ اس کے ﻧﺘﯿﺠﮯ ﮐﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ ﺍﻧﮑﻮﮈﺭ ﮐﯽ ﻃﺮﻑ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻭﺍﺿﺢ ﺑﺮﯾﻦ ﭘﯿﭩﺮﻥ ﮐﺎ ﻣﺸﺎﮨﺪﮦ ﮐﯿﺎ ﮔﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺳﮯ ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻣﺴﺌﻠﮧ ﺣﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺩﻭﻧﻮﮞ چوہوں کےﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﻧﮯ ﻣﻞ ﮐﺮ ﮐﺎﻡ ﮐﯿﺎ۔ ﺍﺱ ﺗﺤﻘﯿﻖ ﻣﯿﮟ ﺷﺮﯾﮏ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﻣﺎﮨﺮ سائنسدان ﻣﯿﮕﯿﻞ ﭘﺎﺋﺲ ﻭﯼ ﺍﯾﺮﯾﺎ ﮐﮯ ﻣﻄﺎﺑﻖ، ’’ ﺍﺱ ﺗﺠﺮﺑﮯ ﺳﮯ ﻣﻌﻠﻮﻡ ﮨﻮﺗﺎ ﮨﮯ ﮐﮧ ﮨﻢ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﮐﺎ ﺍﯾﮏ ﺍﯾﺴﺎ ﻧﯿﭧ ﻭﺭﮎ ﺑﻨﺎ ﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ ﺟﻮ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﻣﺨﺘﻠﻒ ﻣﻘﺎﻣﺎﺕ ﭘﺮ ﻣﻮﺟﻮﺩ ﮨﻮﻧﮯ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﺸﺘﺮﮐﮧ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ مل کر ایک جیسا ﮐﺎﻡ ﮐﺮ ﺳﮑﺘﺎ ﮨﮯ۔ ‘‘ ﺍﺱ ﺗﺠﺮﺑﮯ ﮐﯽ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻧﮑﻮﻟﯿﻠﯿﺲ ﮐﯽ ﭨﯿﻢ ﮐﮯ ﺳﺎﺋﻨﺴﺪﺍﻧﻮﮞ ﮐﺎ ﺧﯿﺎﻝ ﮨﮯ ﮐﮧ ﻭﮦ آنے والے وقت ﻣﯿﮟ ﺟﺎﻧﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﻣﺎﻏﻮﮞ ﮐﻮ ﺁﭘﺲ ﻣﯿﮟ جوڑ ﺳﮑﯿﮟ ﮔﮯ ﺟﺲ ﺳﮯ ﻭﮦ ﺍس طرح کے ﻣﺴﺎﺋﻞ ﺣﻞ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﮨﻮ ﺟﺎﺋﯿﮟ ﮔﮯ ﺟﻮ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﮯ ﻃﻮﺭ ﭘﺮ خود سے ﺣﻞ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﺮ سکتے.

0 Reviews
Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image