مصباح الحق کی ریٹائرمنٹ

اسٹار کھلاڑی کو بہترین انداز میں رخصت کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ٹیسٹ ٹیم کے کپتان مصباح الحق کی جانب سے ریٹائرمنٹ کے اعلان پر پاکستان کے سابق کپتانوں اور کھلاڑیوں نے اسٹار کھلاڑی کو بہترین انداز میں رخصت کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔
اس مقصد کیلئے چیئرمین پی سی بی شہر یار خان نے کہا کہ ویسٹ انڈیز سے واپسی پر مصباح الحق کے اعزاز میں تقریب منعقد کی جائے گی اور پاکستان کی ٹیسٹ کرکٹ کی تاریخ کے بہترین کامیاب ترین کپتان کو اچھے انداز میں رخصت کریں گے۔
قذافی اسٹیڈیم لاہورمیں پرنٹ و الیکٹرانک میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے مصباح الحق نے ٹیسٹ کرکٹ سے ریٹائرمنٹ کا اعلان کیا تھا اور کہا کہ ویسٹ انڈیز کے خلاف سیریز ان کے کیریئر کا اختتام ہو گا۔
لاہور کے ﻗﺬﺍﻓﯽ ﺍﺳﭩﯿﮉﯾﻢ ﻣﯿﮟ ﻣﯿﮉﯾﺎ ﺳﮯ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺍﻥ ﮐﮯ ﺍﻭﭘﺮ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮﻣﻨﭧ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮐﻮﺋﯽ ﭘﺮﯾﺸﺮ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺑﻠﮑﮧ ﯾﮧ ﻓﯿﺼﻠﮧ وہ ﺍﭘﻨﯽ ﻣﺮﺿﯽ ﺳﮯ ﮐﺮ ﺭﮨﮯ ﮨﯿﮟ،ﺍﻥ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﮨﺮ ﻣﯿﭻ ﻣﯿﮟ ﮐﺎﻣﯿﺎﺑﯽ ﻧﮩﯿﮟ ﻣﻞ ﺳﮑﺘﯽ ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺍﭘﻨﯽ ﮐﺎﺭﮐﮕﺮﺩﮔﯽ ﺳﮯ ﻣﻄﻤﺌﻦ ﮨﯿﮟ ﺍﻭﺭ ﺑﻄﻮﺭ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﺳﺮﻓﺮﺍﺯ ﮐﻮ ﺳﭙﻮﭦ ﮐﺮﯾﮟ ﮔﮯ،،،، ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺩﻭ ﮨﺰﺍﺭ ﮔﯿﺎﺭﮦ ﺍﻭﺭ ﭘﻨﺪﺭﮦ ﮐﮯ ﻭﺭﻟﮉ ﮐﭗ ﺟﯿﺘﻨﺎ ﺧﻮﺍﺏ ﺗﮭﺎﺭﯾﭩﺎﺋﺮﻣﻨﭧ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﮐﯽ ﻣﻨﺼﻮﺑﮧ ﺑﻨﺪﯼ ﮐﮯ ﺣﻮﺍﻟﮯ ﺳﮯ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ،، ﺍﮔﺮ ﮈﺍﺋﺮﯾﮑﭩﺮ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﮯ ﻋﮩﺪﮮ ﮐﯽ ﺁﻓﺮ ﮨﻮﺋﯽ ﺗﻮ ﺑﻌﺪ ﻣﯿﮟ ﺳﻮﭼﯿﮟ ﮔﮯ ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﺍﺑﮭﯽ ﺗﮏ ﮐﻮﺋﯽ ﺧﺎﺹ ﭘﻼﻥ ﻧﮩﯿﮟ ﮨﮯ ﺗﺎﮨﻢ ﮐﭽﮫ ﻋﺮﺻﮧ ﮈﻭﻣﯿﺴﭩﮏ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﮭﯿﻠﺘﮯ ﺭﮨﯿﮟ ﮔﮯ،ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﻭﯾﺴﭧ ﺍﻧﮉﯾﺰ ﻣﯿﮟ ﮐﻨﮉﯾﺸﻨﺰ ﭼﯿﻠﻨﺠﻨﮓ ﮨﯿﮟ ﺍﺱ ﻟﯿﮯ ﺟﯿﺘﻨﮯ ﮐﮯ ﻟﯿﮯ ﺍﻋﺘﻤﺎﺩﭼﺎﮨﺌﮯ ،، ﺳﻠﯿﮑﺸﻦ ﺳﮯ ﻣﺘﻌﻠﻖ ﺳﻮﺍﻝ ﮐﮯ ﺟﻮﺍﺏ ﻣﯿﮟ ﺍﻥ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﺳﻠﯿﮑﺸﻦ ﮐﻤﯿﭩﯽ ﺑﮩﺘﺮ ﺟﻮﺍﺏ ﺩﮮ ﺳﮑﺘﯽ ﮨﮯ ۔ﺍﻓﺴﻮﺱ ﺭﮨﮯ ﮔﺎ ﮐﮧ ﺍﻧﮉﯾﺎ ﮐﮯ ﺳﺎﺗﮫ ﺳﯿﺮﯾﺰ ﻧﮩﯿﮟ ﮐﮭﯿﻞ ﺳﮑﺎ۔ﺍﻧﮩﻮﮞ ﻧﮯ ﺑﺘﺎﯾﺎ ﮐﮧ ﺭﯾﭩﺎﺋﺮﻣﻨﭧ ﮐﺎ ﻓﯿﺼﻠﮧ ﺗﻮ ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﭘﮩﻠﮯ ﮨﯽ ﮐﺮﻟﯿﺎ ﺗﮭﺎ۔ﻟﯿﮑﻦ ﮐﭽﮫ ﻭﺟﻮﮨﺎﺕ ﮐﯽ ﺑﻨﺎ ﭘﺮ ﺭﮐﻨﺎ ﭘﮍﺍ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﮐﮩﻨﺎ ﺗﮭﺎ ﮐﮧ ﻣﺠﮭﮯ ﺟﻮ ﻋﺰﺕ ﻣﻠﯽ ﮨﮯ میں ﺍﺱ ﭘﺮ ﺍﻟﻠﮧ ﮐﺎ ﺷﮑﺮ ﮔﺰﺍﺭ ﮨﻮﮞ،،ﺳﭙﺎﭦ ﻓﮑﺴﻨﮓ ﺳﮑﯿﻨﮉﻝ ﭘﺮ ﮔﻔﺘﮕﻮ ﮐﺮﺗﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﮐﮩﺎ ﮐﮧ ﺳﭙﺎﭦ ﻓﮑﺴﻨﮓ ﺟﯿﺴﯽ ﭼﯿﺰﯾﮟ ﮨﻮﺟﺎﺗﯽ ﮨﯿﮟ ﻟﯿﮑﻦ ﺍﺏ ﭘﻠﯿﺌﺮﺯﺳﻤﺠﮫ ﺩﺍﺭ ﮨﻮﮔﺌﮯ ﮨﯿﮟ ۔

ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﮐﯽ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺮﮐﭧ ﮐﯿﻠﺌﮯ ﮔﺮﺍﮞ ﻗﺪﺭ ﺧﺪﻣﺎﺕ ﮨﯿﮟ
ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ 2001ء ﻣﯿﮟ ﻧﯿﻮﺯﯼ ﻟﯿﻨﮉ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﭨﯿﺴﭧ ﻣﯿﭻ ﺳﮯ ﺑﯿﻦ ﺍﻻﻗﻮﺍﻣﯽ ﮐﺮﮐﭧ ﻣﯿﮟ ﻗﺪﻡ ﺭﮐﮭﺎ، ﺟﺒﮑﮧ 2002ء ﻣﯿﮟ ﻧﯿﻮﺯﯼ ﻟﯿﻨﮉ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﮨﯽ ﻭﻥ ﮈﮮ ﮐﯿﺮﺋﯿﺮ ﮐﺎ ﺁَﻏﺎﺯ ﮐﯿﺎ، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ 72 ﭨﯿﺴﭧ ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ 45.84 ﮐﯽ ﺍﻭﺳﻂ ﺳﮯ 5000 ﺭﻧﺰ ﺑﻨﺎﺋﮯ،،، 161 ﻧﺎﭦ ﺁﺅﭦ ﺍﻥ ﮐﮯ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﯿﺮﺋﺮ ﮐﺎ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺳﮑﻮﺭ ﮨﮯ،،، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﭨﯿﺴﭧ ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ 10 ﺳﻨﭽﺮﯾﺎﮞ ﺍﻭﺭ 36 ﻧﺼﻒ ﺳﻨﭽﺮﯾﺎﮞ ﺳﮑﻮﺭ ﮐﯿﮟ، ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺯﮦ ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ 162 ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ 43.44 ﮐﯽ ﺍﻭﺳﻂ ﺳﮯ 5122 سکور ﺟﻮﮌﮮ ،ﺟﻦ ﻣﯿﮟ 42 ﻧﺼﻒ ﺳﻨﭽﺮﯾﺎﮞ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ، ﺍﭘﻨﮯ ﭘﻮﺭﮮ ﺍﯾﮏ ﺭﻭﺯﮦ ﮐﯿﺮﺋﯿﺮ ﻣﯿﮟ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﭽﺮﯼ ﺳﮑﻮﺭ ﮐﺮﻧﮯ ﻣﯿﮟ ﻧﺎﮐﺎﻡ ﺭﮨﮯ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﻭﻥ ﮈﮮ ﮐﺎ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺳﮑﻮﺭ 96 ﺭﻧﺰ ﻧﺎﭦ ﺁﺅﭦ ﮨﮯ، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﻧﮯ 39 ﭨﯽ ﭨﻮﺋﻨﭩﯽ ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ 778 ﺭﻧﺰ ﺑﻨﺎﺋﮯ، ﺟﻦ ﻣﯿﮟ 3 ﻧﺼﻒ ﺳﻨﭽﺮﯾﺎﮞ ﺑﮭﯽ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ، ﺍﻥ ﮐﺎ ﭨﯽ ﭨﻮﺋﻨﭩﯽ ﮐﺎ ﺑﮩﺘﺮﯾﻦ ﺳﮑﻮﺭ 87 ﺭﻧﺰ ﻧﺎﭦ ﺁﺅﭦ ﺭﮨﺎ۔۔ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ ﮐﺌﯽ ﺍﮨﻢ ﻓﺘﻮﺣﺎﺕ ﺳﮯ ﮨﻤﮑﻨﺎﺭ ﮐﺮﺍﯾﺎ۔ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﻧﮯ ﺍﺱ ﻭﻗﺖ ﮐﻤﺎﻥ ﺳﻨﺒﮭﺎﻟﯽ ﺟﺐ پاکستان ﭨﯿﻢ ﭨﻮﭦ ﭘﮭﻮﭦ ﮐﺎ ﺷﮑﺎﺭ ﺗﮭﯽ،، ﻟﯿﮑﻦ ﺍﯾﮏ ﻭﻗﺖ آیا جب ﺍﭘﻨﯽ ﭨﯿﻢ ﮐﻮ ﻧﻤﺒﺮ ﻭﻥ ٹیم ﺑﻨﺎ ﺩﯾﺎ، ﭨﮏ ﭨﮏ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﻮﻧﮯ ﻭﺍﻟﮯ ﻣﺼﺒﺎﺡ الحق ﻧﮯ ﮐﺌﯽ ﻣﻮﺍﻗﻌﻮﮞ ﭘﺮ ﻧﺎﻗﺪﯾﻦ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺍﭘﻨﯽ بھرپور ﭘﺮﻓﺎﺭﻣﻨﺲ ﺳﮯ ﺩﯾﺎ۔
ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺮﮐﭧ ﭨﯿﻢ ﮐﺎ ﺣﺼﮧ ﺭﮨﺘﮯ ﮨﻮﺋﮯ ﮐﺌﯽ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺑﻨﺎﺋﮯ، ﺟﻦ ﻣﯿﮟ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﯽ تاریخ کیﺗﯿﺰ ﺗﺮﯾﻦ ﺳﻨﭽﺮﯼ، ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ ﮐﭙﺘﺎﻧﯽ کے فرائض سر انجام دینا، ﺳﺐ ﺳﮯ ﻣﻌﻤﺮ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﮨﻮﻧﮯ ﺳﻤﯿﺖ بہت سے ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺷﺎﻣﻞ ﮨﯿﮟ
ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﺑﮩﺖ ﺳﮯ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈﺯ ﺍﭘﻨﮯ ﭘﺎﺅﮞ ﺗﻠﮯ ﺭﻭﻧﺪ ﮈﺍﻟﮯ، ﺑﻄﻮﺭ ﭨﯽ ﭨﻮﺋﻨﭩﯽ ﺍﻭﺭ ﻭﻥ ﮈﮮ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﭘﮩﻠﮯ 5 ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ ﻓﺘﺢ ﮐﺎ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺑﻨﺎﯾﺎ،، 53 ﭨﯿﺴﭧ ﻣﯿﭽﺰ ﮐﯽ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﺮ ﮐﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﭘﮩﻠﮯ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻧﯽ کپتان ﮨﯿﮟ، ﺍﺱ ﺳﮯ ﭘﮩﻠﮯ ﯾﮧ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﻋﻤﺮﺍﻥ ﺧﺎﻥ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﺗﮭﺎ ﺟﻨﮩﻮﮞ ﻧﮯ 48 ﭨﯿﺴﭧ ﻣﯿﮟ ﮐﭙﺘﺎﻧﯽ ﮐﯽ، ﺑﻄﻮﺭ ﭨﯿﺴﭧ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻓﺘﻮﺣﺎﺕ ﮐﺎ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺑﮭﯽ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮨﯽ ﮨﮯ، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﻧﮯ ﺍﭘﻨﮯ ﺗﻤﺎﻡ 48 ﻣﯿﭽﺰ ﻣﯿﮟ 35 ﺑﺮﺱ ﮐﯽ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﺑﻌﺪ ﻗﯿﺎﺩﺕ ﮐﯽ، ﺍﺱ ﻋﻤﺮ ﻣﯿﮟ ﮐﺴﯽ ﻧﮯ ﺑﮭﯽ ﯾﮧ ﺍﻋﺰﺍﺯ ﻧﮧ ﭘﺎﯾﺎ، ﻣﺼﺒﺎﺡ ﻧﮯ ﺑﻄﻮﺭ ﮐﭙﺘﺎﻥ 10 ﺳﮯ ﺯﺍﺋﺪ ﺳﯿﺮﯾﺰﺟﺘﻮﺍﺋﯿﮟ ﺟﻮ ﺍﯾﺸﯿﺎ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﮨﯿﮟ، ﺁﺳﭩﺮﯾﻠﯿﺎ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﺗﯿﺰ ﺗﺮﯾﻦ ﺳﻨﭽﺮﯼ بنا ﮐﺮ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺑﮏ ﻣﯿﮟ ﺍﯾﮏ ﺍﻭﺭ ﺍﺿﺎﻓﮧ ﮐﯿﺎ،، ﻟﯿﮑﻦ ﺑﻄﻮﺭ ﻭﻥ ﮈﮮ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﮐﻮﺋﯽ ﺑﮭﯽ ﺳﻨﭽﺮﯼ ﻧﮧ ﮐﺮﻧﮯ ﮐﺎ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈ ﺑﮭﯽ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﮐﮯ ﭘﺎﺱ ﮨﯽ ﮨﮯ، ﺟﻮ ﺷﺎﺋﺪ ﮐﻮﺋﯽ ﺩﻭﺳﺮﺍ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﺗﻮﮌﻧﺎ نہیں ﭼﺎﮨﮯ گا، ﺍﯾﮏ ﺳﺎﻝ ﻣﯿﮟ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﻧﺼﻒ ﺳﻨﭽﺮﯾﺎﮞ ﺍﻭﺭ ﺳﺐ ﺳﮯ ﺯﯾﺎﺩﮦ ﺭﻧﺰ ﺑﻨﺎ ﮐﺮ ﺳﭽﻦ ﭨﻨﮉﻭﻟﮑﺮ، ﮔﯿﺮﯼ ﮐﺮﺳﭩﻦ ﺍﻭﺭ ﻭﯾﺮﺍﺕ ﮐﻮﮨﻠﯽ ﮐﮯ ﺭﯾﮑﺎﺭﮈﺯ بھی توڑے۔
ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﺍﭘﻨﯽ ﺳﺴﺖ ﺑﯿﭩﻨﮓ ﮐﯽ ﻭﺟﮧ ﺳﮯ ﭨﮏ ﭨﮏ ﮐﮯ ﻧﺎﻡ ﺳﮯ ﻣﺸﮩﻮﺭ ﮨﻮﺋﮯ، ﻟﯿﮑﻦ ﺟﺐ ﺑﮭﯽ ﻣﯿﺪﺍﻥ ﻣﯿﮟ ﺍﺗﺮﮮ ﺑﺎﺅﻟﺮﺯ ﺍﻭﺭ ﻓﯿﻠﮉﺭﺯ ﮐﯿﻠﺌﮯ پریشان کن ﺛﺎﺑﺖ ﮨﻮﺋﮯ، ﮨﻤﯿﺸﮧ ﺗﻨﻘﯿﺪ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺑﻠﮯ اور اچھے رنز ﺳﮯ ﺩﯾﺎ، ﺍﺩﮬﯿﮍ ﻋﻤﺮ ﮐﮯ ﻃﻌﻨﮯ ﭘﺮ ﭘﺶ ﺍﭘﺲ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺳﺐ ﮐﻮ ﺣﯿﺮﺍﻥ ﮐﺮ ﮈﺍﻻ۔
ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﮐﻮ ﺳُﺴﺖ ﺑﯿﭩﻨﮓ ﮐﺮﻧﮯ ﭘﺮ ﭨُﮏ ﭨُﮏ ﮐﺎ ﺧﻄﺎﺏ ﺩﯾﺎ ﮔﯿﺎ، ﻟﯿﮑﻦ ﻭﮦ ﺳُﺴﺖ ﺑﯿﭩﻨﮓ ﺍﺱ ﻟﺌﮯ ﮐﺮﺗﮯ ﺗﮭﮯ ﮐﮧ ﭨﯿﻢ ﮐﻮ ہر ﻣﺸﮑﻞ ﻭﻗﺖ ﻣﯿﮟ ﺳﮩﺎﺭﺍ ﺩﮮ ﺳﮑﯿﮟ۔ ﺟﺐ بھی ﻣﺼﺒﺎﺡ الحق ﮐﺎ بلا ﭼﻼ ﻣﺨﺎﻟﻒ بالرز ﮐﯽ ﺷﺎﻣﺖ ﺁﺋﯽ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﺮﮐﭧ ﻣﯿﮟ ﻓﮑﺴﻨﮓ ﮐﺎ ﻃﻮﻓﺎﻥ ﺍٓﯾﺎ ﺗﻮﻣﺼﺒﺎﺡ الحق ﭼﭩﺎﻥ ﺑﻦ گئے، ﺑﮑﮭﺮﯼ ﮨﻮﺋﯽ ﭨﯿﻢ ﮐﻮ ﺳﯿﻤﭩﺎ ﺍﻭﺭ ﻓﺎﺋﭩﻨﮓ ﭘﺎﻭﺭ ﺳﮯ مخالفوں ﮐﻮ ﮨﺮﺍﺗﺎ ﭼﻼ ﮔﯿﺎﺍﺩﮬﯿﮍ ﻋﻤﺮ ﮐﺎ ﻃﻌﻨﮯ ﮐﺎ ﺟﻮﺍﺏ ﺍﯾﺴﺎ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ سب ﻧﺎﻗﺪﯾﻦ ﮐﮯ ﻣﻨﮧ ﺑﻨﺪ ﮨﻮ ﮔﺌﮯ، ﮔﻮﺭﻭﮞ ﮐﮯ ﺩﯾﺲ ﻣﯿﮟ ﺍﻧﮩﯿﮟ ﮐﮯ ﺧﻼﻑ ﻣﯿﭻ ﺟﯿﺖ ﮐﺮ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﺍﻟﺤﻖ ﻧﮯ 10 ﭘﺶ ﺍﭘﺲ ﻟﮕﺎ ﮐﺮ ﺑﺘﺎ ﺩﯾﺎ ﮐﮧ ﻭﮦ ﺍﺑﮭﯽ بوڑھے نہیں ہوئے ﮨﯿﮟ ﮐﮩﯿﮟ ﺑﮭﯽ ﮐﭽﮫ ﺑﮭﯽ ﮐﺮﺳﮑﺘﮯ ﮨﯿﮟ۔ﻣﺼﺒﺎﺡ ﻧﮯﭨﯿﺴﭧ ﮐﺮﮐﭧ ﻣﯿﮟ ﺩﮬﺎﮎ ﺑﭩﮭﺎﺋﯽ، ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﻮ دنیا کی ﭨﺎﭖ ﭨﯿﻢ ﺑﻨﺎﺩﯾﺎ، ﺟﻮ ﭨﯿﻢ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﺳﺎﻣﻨﮯ ﺍٓﺋﯽ ،ٹھہر ﻧﮧ ﺳﮑﯽ، ﭨﮏ ﭨﮏ ﮐﮯ ﺑﺎﻭﺟﻮﺩ ﻣﺼﺒﺎﺡ ﭘﺎﮐﺴﺘﺎﻥ ﮐﮯ ﮐﺎﻣﯿﺎﺏ ﺗﺮﯾﻦ ﮐﭙﺘﺎﻥ ﺑﻨﮯ،

0 Reviews
Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image