شاہ عبد اللطیف بھٹائی کاعرس

14 ویں صفر.شاہ عبدالطیف بھٹائی ایک عالم، صوفی اورشاعر- سندھی زبان کے سب سے بڑے مسلم شاعر سمجھے جاتے ہیں-

صوفی شاعرعبداللطیف بھٹائی کے 274واں سالانہ عرس3 نومبر 2017 بروز جمعہ کو شروع ہو گا جو کہ3روزہ سالانہ عرس ہے -شاہ عبداللطیف بھٹائی کا مزارحیدرآباد سے55 کلو میٹر دور سندھ کے شہر بھٹ شاہ میں واقع ہےتین روزہ سالانہ عرس پرسندھ بھر سے ہزاروں عقیدت مند شاہ عبداللطیف بھٹائی کے مزارپر تشریف لاتے ہیں-

شاہ عبداللطیف بھٹائی (لاکھینولطیف، لطیف گھوٹ، بھٹائی، اور بھٹ جو شاہ) ایک مبنی سندھی صوفی عالم، صوفیانہ شاعر تھے جو بڑے پیمانے پر سندھی زبان کے سب سے بڑے شاعر تھے-ان کی جمع کردہ نظمیں "شاہ جو رسالو " ہیں- جن کے متعدد ورژن موجود ہیں اور انگریزی اردواوردیگر زبانوں میں ترجمہ کیا گیا ہے-شاہ عبدالطیف بھٹائی سندھ کے شاعر کے طور پر بھی مشہور ہیں-

شاہ عبداللطیف بھٹائی کا عرس سندھ میں ایک عظیم تہوار ہے- جس میں صوبے کے تقریبا ہرگاؤں اورشہرسےلوگ شرکت کرتے ہیں-عقیدت مند لوگ یہاں کھلی جگہوں پر خیمے قائم کرتے ہیں اوروہاں کے رہائشی آنے والے عقیدت مند لوگوں کی رہائش کیلئے کمروں کا انتظام کرتے ہیں اور قرآنی آیات، چادر ،پھولوں، گلاب پنکھڑیوں، خشک پھلوں، پھولوں کی چادریں اور مٹھائیاں، مصنوعی زیورات، جوتے اور مختلف روایتی ہتھیار دستکاری اور کھلونوں پر مشتمل فروخت کے لئے دکانیں قائم کرتے ہیں۔

سالانہ عرس کے تہوار کے دوران گورنمنٹ انتظامیہ کی طرف سے قانون کی بحالی کو یقینی بنانے اور سالانہ عرس کے جشن میں کسی غیر معمولی حادثے کو رونما نہ ہونے کیلئے یقینی بنانے کے لئے سیکورٹی انتظام کیے جاتے ہیں۔ سکیورٹی کے انتظامات اہم داخلے والے دروازے پربند سرکٹ کیمروں کے ذریعے نگرانی، لوگوں کی تلاشی اور گاڑیوں کی جانچ پڑتال کی جاتی ہے۔

دیگر تمام شعبہ جات کی طرف سے ثقافت، صحت اور اوقاف سمیت سبھی کی بھر پور کوشش ہوتی ہے کہ صوفی شاعرکے عقیدت مندوں کو تمام سہولیات فراہم کی جائیں۔صغراں جی کچیری ایکسیلینس سنٹر

Excellence Center جو کہ وہاں پہ موجود ہے وہاں منعقد ہوتا ہے اور دوپہر میں ملاکھڑا ( سندھ میں کھیلا جانے والا مشہور کھیل) ملاکھڑا گرائونڈ میں منعقد ہوتا ہے۔موسیقی کنسرٹ Musical concert لطیفی راگ رات میں بھٹائی آڈیٹوریم Bhitai Auditorium میں منعقد ہوتا ہے۔



مزار کے اندرماحول بہت ہی خوبصورت ہے اور اس تہوار کا اہم واقعہ بہترین فنکاروں کو ان کی بہترین کاردگردگی پر سالانہ لطیف ایوارڈز کی تقسیم کی جاتی ہے-یہ عرس کچھ دوسرے ثقافتی تہواروں میں پاکستانی ثقافت کا اہم حصہ ہیں اور بہت مقبول ہیں دوسری جگہوں سے لوگ آتے ہیں اور اس تہوار میں شرکت کرتے ہیں اور فلسفہ، محبت ،امن اور اس صوفی کے ہم آہنگی سے فیض یاب ہوتے ہیں۔





-

0 Reviews
Blogs, Vlogs iGreen Bottom Image